Ministry of Planning
Development & Reform
News Alerts: وفاقی وزیر و ڈپٹی چئیرمین پلاننگ کمیشن احسن اقبال کی صدارت میں سنٹرل ڈیویلپمنٹ ورکنگ پارٹی کا اجلاس ---------- اجلاس میں وفاقی وزارتوں اور صوبائی محکموں کے اعلیٰ حکام کی شرکت ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں 61.9 ارب روپے سے زائد کے7ترقیاتی منصوبوں کی منظوری ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے چار میگا پراجیکٹس کو مزید منظوری کیلئے ایکنک بھجوادیا ---------- ترقیاتی منصوبوں میں ٹرانسپورٹ و کیمونیکیشن، آبی ذخائر، انفارمیشن ٹیکنالوجی ، ماس میڈیا، افرادی قوت اور اعلیٰ تعلیم کے منصوبے شامل ہیں ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے ٹرانسپورٹ سیکٹر میں 43.5 ارب روپے کے 2میگا پراجیکٹس کی منظوری دے دی ---------- ان منصوبوں میں ٹھوکر نیاز بیگ تا ہدیارہ ڈریں ملتان روڈ کی اپ گریڈیشن شامل ہے ---------- منصوبے کا بتدائی تخمینہ 10.3ارب روپے لگایا گیا ہے۔ ---------- منصوبے کے تحت موجودہ این 5 چار لین سڑک کی 11 کلو میٹر سیکشن کو اپ گریڈ کیا جائے گا ---------- منصوبے کیلئے اراضی کا حصول ٹیکسوں سے مستثنیٰ قرار دیا جائے، وفاقی وزیر احسن اقبال ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے جگلوٹ سکردو روڈ کی اپ گریڈیشن منصوبے کی منظوری دے دی منصوبے کا ابتدائی تخمینہ 33.13ارب روپے لگایا گیا ہے ---------- نیشنل ہائے وے اتھارٹی کے اس منصوبے کے تحت 164 کلو میٹر جگلوٹ سے سکردو ایس ۔1 شاہراہ کی اپ گریڈیشن کی جائے گی ---------- شاہراہ کی تعمیر سے سکردو اور گلگت بلتسان کے عوام کو بہتر سفری سہولیات میسر آئیں گی ---------- منصوبے پر تعمیراتی کا م شروع کرانے کیلئے فوری اقدامات کی جائے، وفاقی وزیر ---------- منصوبے کی ڈیزائنگ نقائص سے پاک ہو ، منصوبے کی لاگت کی تیسرے فریق سے توثیق کرائی جائے، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں وارسک کنال ری ماڈلنگ منصوبہ منظور منصوبے کا ابتدائی تخمینہ 12.14ارب روپے لگایا گیا ہے ---------- منصوبے کے تحت پشاور اور نوشہرہ کے اضلاع میں دریا کابل کےنہری نظام کو بہتر کیا جائے گا۔ ---------- آبی ذخائر کے منصوبوں کی فنڈنگ کے حوالے سے قومی اقتصادی کونسل کے 50/50فیصد فارمولے کو مد نظر رکھا جائے، وفاقی وزیر ---------- ایسے منصوبوں میں 50فیصد صوبائی حکومت جبکہ 50فیصد فنڈز کی ذمہ داری وفاق کی ہوگی، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں 10کروڑ روپے کی لاگت سے ایس سی او ٹیکنیکل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ گلگت بلتستان کے قیام کا منصوبہ منظور منصوبے کے تحت موجودہ اور روزگار کے نئے مواقعوں کے حوالے سے اعلیٰ معیارکی تربیت کیلئے تکنیکی ادارہ قائم کیا جائے گا ---------- اس منصوبوں سے گلگت بلتستان کے ہزاروں نوجوان کو جدید ٹیکنالوجیز کے بارے میں تربیت دی جائے گی اس ادارے کی عمارت کی تعمیر مقامی روائتی فن تعمیر کو مد نظر رکھ کر کیا جائے، احسن اقبال ---------- سی پیک کے تحت جاری فائبر آپٹک کا منصوبہ رواں سال دسمبر میں مکمل ہوگا جس سے یہ علاقے ایک نئے دور میں داخل ہوں گے، وفاقی وزیر ---------- فائبر آپٹک منصوبے کی تکمیل کیساتھ ساتھ گلگت بلتستان میں سافٹ وئیر پارک کے قیام پر کام شروع کیا جائے، احسن اقبال کی ہدایت ---------- سافٹ وئیر پارک کے قیام سے اس علاقے کے عوام انفارمیشن ٹیکنالوجی کے نئے دور سے مستفید ہوسکیں گے، احسن اقبال ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نےسیاحت کے شعبے میں پنجاب ٹورازم و اکنامک گروتھ پراجیکٹ کی منظوری دیدی حکومت پنجاب کےاس منصوبے پر 5.7 ارب روپے کی لاگت آئے گی، منصوبہ ورلڈ بنک کے تعاون سے مکمل کیا جائے گا ---------- منصوبے کے تحت صوبہ پنجاب کے سیاحتی مقامات کو ترقی دینے اور آثار قدیمہ کو محفوظ بنایا جائے گا صوبے میں پہلے سےسیاحت کے شعبے میں کام کرنے والے اداروں کو اس منصوبے میں شامل کیا جائے ، وفاقی وزیر کی ہدایت ---------- سیاحت کو فروغ دینے وآثار قدیمہ کے تحفظ کیلئے تمام صوبے ماسٹر پلان بنائے، وفاقی وزیر احسن اقبال ---------- سیاحتی مقامات تک رسائی کیلئے سڑکوں و دیگرسہولیات کی تعمیر کیساتھ ساتھ معلومات کی فراہمی یقینی بنائی جائے، احسن اقبال ---------- سیاحتی مقامات کی مناسب تشہیر یقینی بنا کر دنیا بھر سے سیاحوں کومتوجہ کیا جائے، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے فاٹا اور خیبر پختونخوا کے نوجوانوں کی تکنیکی تربیت کا منصوبہ منظور کرلیا 78.6ملین روپے کے اس منصوبے کے تحت 1100نوجوانوں کو ٹیکنیکل ٹریننگ دی جائے گی ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے اعلیٰ تعلیم کے شعبے میں پیداواریت، معیار و جدت پراجیکٹ منطور کرلیا اعلیٰ تعلیم کے اس منصوبے پر 276.4ملین روپے کی لاگت آئے گی

Events

Picture of the Event

Image 1

Image 2

Image 3

Image 4

Dated : 25 April 2017

WORLD’s INVESTORS EYING PAKISTAN AS A LUCRATIVE INVESTMENTDESTINATION

Event Venue : P,Block Pak Sec Islamabad

Dated : 25 April 2017

Federal Minister for Planning, Development and Reform, Prof. Ahsan Iqbal said that Pakistan has achieved an economic growth rate of 5 percent and with political stability? world’s key investors are eying Pakistan as a potential investment market.He expressed these views on Tuesday while addressing the participants of 106thNational Management Course who visited Planning Commission as part of their Inland Study Tour. Prof. Ahsan Iqbal said that initiation of CPEC was a watershed moment in the history of Pakistan that has elevated country’s status as potential regional economic power. He told the participants that Pakistan needs to benefit from opportunities being offered by CPEC and transform its economy to a modern industrial economy. He further said that lack of proper leadership and power politics has hindered Pakistan’s progress and therefore we must learn from our past mistakes. Minister briefed the participants that global political landscape is changing sharply and inward political approach is being followed by west in US, UK and Europe. In contrast, China is promoting regional and global connectivity across the Asia Pacific region as part of its One Belt One Road initiative. In the same vein, Pakistan’s Vision 2025 enables Pakistan to leverage its geo-strategic location and explore the economic options offered therein. Professor Iqbal said that CPEC is a fusion of Pakistan’s vision 2025 and One Built One Road initiative. Stressing the importance of Pakistan’s geographical location, he said that CPEC would physically and economically integrate Pakistan with China, Central Asian Republics and Eurasian region under the wider framework of One Belt One Road (OBOR) and Pakistan vision 2025. He noted that CPEC and One Built One Road would collectively transform and improve the lives of three billion people which rightly sets the context of this mega regional initiative as “Game Changer” in the region. He said that CPEC has changed world narrative about Pakistan. “The country which was ranked as most dangerous country of the world is now termed as emerging economy”. Pakistan is labeled as a safe haven for billion dollar Chinese investment, he added. Explaining the breakdown of Chinese investment under CPEC, he stated that the US$35 billion investment under Energy Portfolio is being done in Independent Power Producer’s (IPP) Mode which is being regulated by NEPRA. He further said that CPEC energy projects would generate 14-15000 megawatts of electricity which would help overcome the prevailing energy crisis. CPEC energy portfolio includes coal, hydel and renewable energy projects. The present government for the first time opted for utilization of untapped black gold to generate electricity on much cheaper rates which would support to rise in export, he added. He dispelled the impression that coal power plants would create environmental hazards, saying that Pakistan is using super critical modern technology which reduces hazardous emissions. Professor Ahsan Iqbal urged the participating civil service officers to put in their best efforts in serving the country. He emphasized that officers should use their best abilities in policy formulation and implementation in their respective departments. On this occasion, Additional Secretary Ministry of Planning, Development and Reform, Mr. Zafar Hassan welcomed the participants and provided detailed answers to their questions. He told the participants that CPEC Long term plan sets the scope for development of agriculture and other sectors under CPEC framework. He further said that Board of Investment is preparing a comprehensive package for industries which would be furnished shortly. “The package would support to implement the plan of establishing special economic zones” he said, adding that all the provincial governments are fully onboard to make this sector a success story. Project Director CPEC, Mr. Hassan Daud Butt gave a detailed briefing on CPEC to participants. He apprised the participants that work in energy and infrastructure projects are being undertaken at a faster pace.He further said that CPEC Long Term Plan has been prepared after an extensive consultative process with all stake holders and it will be approved shortly.