Ministry of Planning
Development & Reform
News Alerts: وفاقی وزیر و ڈپٹی چئیرمین پلاننگ کمیشن احسن اقبال کی صدارت میں سنٹرل ڈیویلپمنٹ ورکنگ پارٹی کا اجلاس ---------- اجلاس میں وفاقی وزارتوں اور صوبائی محکموں کے اعلیٰ حکام کی شرکت ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں 61.9 ارب روپے سے زائد کے7ترقیاتی منصوبوں کی منظوری ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے چار میگا پراجیکٹس کو مزید منظوری کیلئے ایکنک بھجوادیا ---------- ترقیاتی منصوبوں میں ٹرانسپورٹ و کیمونیکیشن، آبی ذخائر، انفارمیشن ٹیکنالوجی ، ماس میڈیا، افرادی قوت اور اعلیٰ تعلیم کے منصوبے شامل ہیں ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے ٹرانسپورٹ سیکٹر میں 43.5 ارب روپے کے 2میگا پراجیکٹس کی منظوری دے دی ---------- ان منصوبوں میں ٹھوکر نیاز بیگ تا ہدیارہ ڈریں ملتان روڈ کی اپ گریڈیشن شامل ہے ---------- منصوبے کا بتدائی تخمینہ 10.3ارب روپے لگایا گیا ہے۔ ---------- منصوبے کے تحت موجودہ این 5 چار لین سڑک کی 11 کلو میٹر سیکشن کو اپ گریڈ کیا جائے گا ---------- منصوبے کیلئے اراضی کا حصول ٹیکسوں سے مستثنیٰ قرار دیا جائے، وفاقی وزیر احسن اقبال ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے جگلوٹ سکردو روڈ کی اپ گریڈیشن منصوبے کی منظوری دے دی منصوبے کا ابتدائی تخمینہ 33.13ارب روپے لگایا گیا ہے ---------- نیشنل ہائے وے اتھارٹی کے اس منصوبے کے تحت 164 کلو میٹر جگلوٹ سے سکردو ایس ۔1 شاہراہ کی اپ گریڈیشن کی جائے گی ---------- شاہراہ کی تعمیر سے سکردو اور گلگت بلتسان کے عوام کو بہتر سفری سہولیات میسر آئیں گی ---------- منصوبے پر تعمیراتی کا م شروع کرانے کیلئے فوری اقدامات کی جائے، وفاقی وزیر ---------- منصوبے کی ڈیزائنگ نقائص سے پاک ہو ، منصوبے کی لاگت کی تیسرے فریق سے توثیق کرائی جائے، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں وارسک کنال ری ماڈلنگ منصوبہ منظور منصوبے کا ابتدائی تخمینہ 12.14ارب روپے لگایا گیا ہے ---------- منصوبے کے تحت پشاور اور نوشہرہ کے اضلاع میں دریا کابل کےنہری نظام کو بہتر کیا جائے گا۔ ---------- آبی ذخائر کے منصوبوں کی فنڈنگ کے حوالے سے قومی اقتصادی کونسل کے 50/50فیصد فارمولے کو مد نظر رکھا جائے، وفاقی وزیر ---------- ایسے منصوبوں میں 50فیصد صوبائی حکومت جبکہ 50فیصد فنڈز کی ذمہ داری وفاق کی ہوگی، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی میں 10کروڑ روپے کی لاگت سے ایس سی او ٹیکنیکل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ گلگت بلتستان کے قیام کا منصوبہ منظور منصوبے کے تحت موجودہ اور روزگار کے نئے مواقعوں کے حوالے سے اعلیٰ معیارکی تربیت کیلئے تکنیکی ادارہ قائم کیا جائے گا ---------- اس منصوبوں سے گلگت بلتستان کے ہزاروں نوجوان کو جدید ٹیکنالوجیز کے بارے میں تربیت دی جائے گی اس ادارے کی عمارت کی تعمیر مقامی روائتی فن تعمیر کو مد نظر رکھ کر کیا جائے، احسن اقبال ---------- سی پیک کے تحت جاری فائبر آپٹک کا منصوبہ رواں سال دسمبر میں مکمل ہوگا جس سے یہ علاقے ایک نئے دور میں داخل ہوں گے، وفاقی وزیر ---------- فائبر آپٹک منصوبے کی تکمیل کیساتھ ساتھ گلگت بلتستان میں سافٹ وئیر پارک کے قیام پر کام شروع کیا جائے، احسن اقبال کی ہدایت ---------- سافٹ وئیر پارک کے قیام سے اس علاقے کے عوام انفارمیشن ٹیکنالوجی کے نئے دور سے مستفید ہوسکیں گے، احسن اقبال ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نےسیاحت کے شعبے میں پنجاب ٹورازم و اکنامک گروتھ پراجیکٹ کی منظوری دیدی حکومت پنجاب کےاس منصوبے پر 5.7 ارب روپے کی لاگت آئے گی، منصوبہ ورلڈ بنک کے تعاون سے مکمل کیا جائے گا ---------- منصوبے کے تحت صوبہ پنجاب کے سیاحتی مقامات کو ترقی دینے اور آثار قدیمہ کو محفوظ بنایا جائے گا صوبے میں پہلے سےسیاحت کے شعبے میں کام کرنے والے اداروں کو اس منصوبے میں شامل کیا جائے ، وفاقی وزیر کی ہدایت ---------- سیاحت کو فروغ دینے وآثار قدیمہ کے تحفظ کیلئے تمام صوبے ماسٹر پلان بنائے، وفاقی وزیر احسن اقبال ---------- سیاحتی مقامات تک رسائی کیلئے سڑکوں و دیگرسہولیات کی تعمیر کیساتھ ساتھ معلومات کی فراہمی یقینی بنائی جائے، احسن اقبال ---------- سیاحتی مقامات کی مناسب تشہیر یقینی بنا کر دنیا بھر سے سیاحوں کومتوجہ کیا جائے، وفاقی وزیر ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے فاٹا اور خیبر پختونخوا کے نوجوانوں کی تکنیکی تربیت کا منصوبہ منظور کرلیا 78.6ملین روپے کے اس منصوبے کے تحت 1100نوجوانوں کو ٹیکنیکل ٹریننگ دی جائے گی ---------- سی ڈی ڈبلیو پی نے اعلیٰ تعلیم کے شعبے میں پیداواریت، معیار و جدت پراجیکٹ منطور کرلیا اعلیٰ تعلیم کے اس منصوبے پر 276.4ملین روپے کی لاگت آئے گی

Press Release

YEAR 2017; Completion of CPEC early harvest projec...

Published : 12 June 2017

Islamabad, June 12, 2017:- The year 2017, an important year for China ...


Federal Minister Ahsan Iqbal addressing at Nationa...

Published : 29 May 2017

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی اح...


Ahsan Iqbal addressing Senate Of Pakistan...

Published : 29 May 2017

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی ا...


اسلام آباد میں وفاقی وزیر ا...

Published : 26 May 2017

اسلام آباد میں وفاقی وزیر احسن اقبال ک...


"Economic Consequences of Under Nutrition"

Dated : 24 February 2017

Federal Minister Mr. Ahsan Iqbal addressed the meeting following up on the Report of Economic Consequences of Under Nutrition in Pakistan.

Federal Minister for Planning, Development and Reform Mr. Ahsan Iqbal said that a healthy nation is pivotal to economic and social development, which is one of the major pillars in the Pakistan Vision 2025.

Our government is committed to realizing Sustainable Development Goals (SDGs) through a collaborative approach b/w public and private sectors. Minister Iqbal stated that Public-Private partnership results in synergy of resources directed towards a better Pakistan. Minister expressed these views while talking to the representatives of the organizations working on food and nutrition at P-Block, Pakistan Secretariat.

“Historically, Pakistan has one of the worst nutrition rates in the light of which Government of Pakistan has initiated many national level programmes to counter malnutrition in Pakistan,” Minister Iqbal said.

Minister maintained that under nutrition is both a cause and a consequence of poverty. Poverty and undernutrition have a created a vicious cycle leading to child morbidity and mortality, retarded physical and cognitive growth, diminished learning capacity and school performance, and ultimately lower adult productivity and earnings.

Mr. Ahsan Iqbal noted that under nutrition is a wide spread issue in Pakistan. Fourteen indicators of Undernutrition documented in the most recent National surveys suggest ~100 individual million cases affecting more than half of adult women and two thirds of children. Each indicator in the report suggests a risk towards: survival, health issues, child development, school performance and adult earnings.

These fourteen indicators of Undernutrition include Low body mass index (BMI), Short stature, Anemia, Birth defects(Folic Acid), non-exclusive breastfeeding, non-continued breastfeeding, Underweight, weight for height, stunting (HAZ), Vitamin A deficiency, iodine deficiency disorder (IDD), Zinc deficiency, and Vitamin D deficiency.

Minister said that this study comprehensively covers determinants of undernutrition. Also, it sheds light on the globally established coefficients of risk associated to undernutrition levels. Study undertakes national demographic, health, economic and labor statistics to project depressed National Economic Activity due to current prevalence of Undernutrition in Pakistan, it amounts upto $6.8 billion annually, 2.5% of national GDP.

This study endeavors to measure Undernutrition losses through four pathways which includes Child Mortality attributed to undernutrition, Depressed Future Productivity of Children, Depressed Current Productivity, Excess Healthcare Expenditures.

Minister said that undernutrition coincides with many health and economic deprivations affecting child growth and development. It is not possible to Isolate the “nutrition factor” or the “child development factor” because then it overlooks countless interactions of nutrition, nature and nurture.

GOP has put immense focous on the issue of undernutrition in pregnant women contributes to low birth weight deliveries and Undernutrition in children contributes to impaired immunity and infection.

Minister mentioned that the first pillar of vision 2025 states “the first priority is to invest in every citizen to improve his/her choices and quality of life. This requires capitalizing upon and strengthening existing social capital, improving the human skill base of the population, and providing access to opportunities for advancement. It involves a rapid scaling up of investments in education, health and social development.”

The current widespread issue of malnutrition in Pakistan poses a significant challenge to human and economic development effort. This report intends to demonstrate the enormous economic losses from malnutrition in Pakistan and the need to ensure long-term investment, even beyond the current Vision 2025 in order to uplift Pakistan’s economic potential.

“More analyses are needed to identify the most promising policy options bringing together a series of multisectoral cost-effective interventions for both short and long term results” he concluded